آزادپتن مین شاہراہ تین اضلاع کو ملانے والی روڈ بند مسافر شدید پریشان

سدھنوتی (کے ٹی وی نیوز)
تفصیلات کے مطابق آزادکشمیر مین شاہراؤں میں سے ایک روڈ آزادپتن گزشتہ پانچ سالوں سے کھڈرات کا شکار ہے . کبھی کبھار لینڈ سلائڈنگ کی وجہ سے یہ روڈ بند ہوتی ہے .تو کبھی کھڈوں کی وجہ سے لوڈر گاڑیوں کا ایکسیڈنٹ ہو جاتا ہے جسکی وجہ سے روڈ گھنٹون بند ہوتی ہے.
گزشتہ روز گراری کے پل کے قریب ایک ٹرک روڈ میں ہی الٹ گیا ٹرک کے ٹرائیور نے کے ٹی وی کو بتایا کے صبح تقریبا نماز فجر سے
کچھ دیر قبل سامان لیکر جا رہا تھا اور اچانک گاڑی الٹ گئی

گاڑی الٹنےکی وجہ مین روڈ میں بڑا گہڑا تھا اس کا کہنا تھا کہ میری گاڑی کا شدید نقصان ہوا ،دس گھنٹے ہو گئے ہزاروں مسافر ،مریض کاروباری لو گ خواتین،بچے روڈ بند ہونے کی وجہ سے شدید پریشان ہیں

کے ٹی وی کو وہاں موجود مسافروں نے بتایا کہ یہ پریشانی ہمیں ائے روز پیش آتی ہے کبھی روڈ میں سلائڈنگ ہوئی ہوتی ہے تو کبھی کبھار ٹریفک حادثات کی وجہ سے دس سے بارہ گھنٹے روڈ بند ہوتی ہے .

کے ٹی وی کے بات نمائدہ عمران ناز نے جب ڈرائیوروں سے بات کی انہوں نے بتایا کہ ہمارا لاکھوں روپے کا نقصان ہوجاتا ہے ہماری گاڑیاں روڈ کی خستہ حالی کی وجہ دن بدن نکارہ ہو رہی ہیں اس ایشو پر حکومت کوئی توجہ نہیں دے رہی .

یاد رہے آزادہتن کی اس روڈ کو ڈیفنس روڈ بھی کہا جاتا ہے اور اس کے ساتھ چار بڑے اضلاع کے لوگ منسلک ہیں جن کے کاروبار،تعلیمی معملات ،بیرون ممالک کیلے سفر ،مریضوں کا چیک اپ اور دیگر معملات راولپنڈی یا اسلام آباد یا پاکستان کے دیگر شہرو‌ں سے منسلک ہیں
،روڈ کی بندش کے دوران متعدد ایمبولینسز بھی دس سے بارہ گھنٹے تک پھنسی رہی

مسافروں نے بتایا کہ اکثر روڈ بند رہتی مقامی انتاظامیہ کی جانب سے بیس بیس گھنٹے تک کھولنے کے حوالے سے کوئی اقدام نہیں کیا جاتا .آزادکشمیر کے چار ضلعوں سدھنوتی،پونچھ،باغ ،حویلی اس روڈ سے منسلک ہیں .

صبح قریب چار بجے سے بند یہ روڈ رات دس بجے کے قریب کھولی گئی مسافروں نے وہاں آزادکشمیر کی حکومت اور پاکستان کی حکومت کے خلاف شدید نعرے بازی کی اور مطالبہ کیا کہ آزادپتن کی اس روڈ کا مسئلہ حل کیا جائے بصورت دیگر احتجاج کی کال دی جاے گئی