اسلام آباد: بدمعاش وکلاء کا اسلام آباد ہائی کورٹ‌پر دھاوا، توڑ پھوڑ کے ساتھ ساتھ عدالتیں بند کروا دیں‌.

اسلام آباد (ویب ڈیسک) کچہری میں قائم ‘غیر قانونی چیمبرز’ گرانے پر مشتعل وکلا نے احتجاج کرتے ہوئے اسلام آباد ہائی کورٹ پر دھاوا بول دیا اور توڑ پھوڑ کی۔وکلا نے اسلام آباد کی ضلع کچہری میں تمام عدالتیں بند کرادیں جبکہ اسلام آباد ہائی کورٹ میں بھی تمام عدالتوں میں مقدمات کی کارروائی روک دی گئی۔

کیپٹل ڈیولپمنٹ اتھارٹی (سی ڈی اے) نے رات گئے ایف 8 میں انسداد تجاوزات مہم کے تحت ضلع کچہری کے پارکنگ ایریا اور فٹ ہاتھ پر بنے مبینہ غیر قانونی چیمبرز مسمار کیے تھے۔ جس پر وکلا نے آج صبح احتجاج کرتے ہوئے پہلےسیشن کورٹ میں توڑ پھوڑ کی اور اس کے بعد اسلام آباد ہائی کورٹ پر دھاوا بولا۔

جس وقت وکلا احتجاج کرتے ہوئے چیف جسٹس بلاک پہنچے وہاں اسپیشل سیکیورٹی موجود نہیں تھی. بڑی تعداد میں مشتعل وکلا اسلام آباد ہائی کورٹ میں نعرے بازی کرتے ہوئے داخل ہوئے اور چیف جسٹس بلاک میں موجود کھڑکیوں کے شیشے توڑ دیے۔

احتجاج اور اشتعال انگیزی کے باعث چیف جسٹس اطہر من اللہ اپنے چیمبر میں محصور ہو کر رہ گئے تاہم چیف جسٹس بلاک سے تمام خواتین ملازمین کو باہر نکال دیا گیا۔اس کے علاوہ وکلا کی جانب سے صحافیوں کے ساتھ بھی بدتمیزی کی گئی اور ویڈیو بنانے پر الجھ پڑے اور موبائل فون چھین لیے۔

احتجاج کے باعث اسلام آباد ہائی کورٹ میں تمام سائلین کا داخلہ بھی بند ہوگیا اور عدالت ک کی سروس روڈ کو بھی ٹریفک کے لیے بند کردیا گیا۔وکلا نے اسلام آباد کی ضلع کچہری میں تمام عدالتیں بند کرادیں جبکہ اسلام آباد ہائی کورٹ میں بھی تمام عدالتوں میں مقدمات کی کارروائی روک دی گئی۔