ڈاکٹر شاہنواز احمد صدیقی نے کشمیر بچاؤ تحریک پاکستان کو قومی اتحاد پارٹی میں ضم کرنے کا فیصلہ کر دیا

قومی اتحاد پارٹی اور کشمیر بچاؤ تحریک پاکستان کے درمیان ایک ماہ سے جاری رہنے والے مذاکرات کے بعد
ڈاکٹر شاہنواز احمد صدیقی بانی قائد کشمیر بچاؤ تحریک نے تمام عہدیداران اور کارکنان کی طویل مشاورت سے تحریک کشمیر بچاؤ پاکستان کو ریاستی دھارے اور الیکٹورل سسٹم میں لانے کے لئے قومی اتحاد پارٹی آزاد جموں و کشمیر میں ضم کرنے کا فیصلہ کر لیا جسکی پریس کانفرنس الیکٹرانک میڈیا میں جلد شائع کی جائے گی۔
بانی تحریک کا تعلق عباسپور پونچھ آزاد کشمیر سے ھے اور عرضہ دراز سے کراچی میں مقیم ہیں۔
پاکستان میں مقیم کشمیری مہاجرین کی بارہ نشستوں سمیت آزاد کشمیر کی تینتیس نشستوں پر کشمیر بچاؤ تحریک کی تنظیم موجود ھے جو عرصہ بیس سالوں سے کام کر رہی ھے اور اب الیکشن سے پہلے تمام یونٹس کو سرگرم کیا جائے گا۔
چیئرمین قومی اتحاد پارٹی سردار عبد الرحمان خان اور سیکرٹری جنرل شہزاد خان کی کوششیں رنگ لائیں۔
یہ خبر سنتے ہی قومی اتحاد پارٹی اور کشمیر بچاؤ تحریک پاکستان کے تمام اراکین اور عہدیداران میں خوشی کی لہر دوڑ گئی اور الیکشن 2021 میں اہم کامیابیاں یقینی ہو گئیں۔

قومی اتحاد پارٹی آزاد جموں کشمیر کے تمام اراکین اور زمہداران پارٹی میں ہونے والے تمام اراکین اور زمہداران کو دل کی اتھاہ گہرائیوں سے خوش آمدید کہتے ہیں اور اپنے سے بڑھ کر تعاون کا یقین دلاتے ہیں۔

ڈاکٹر شاہنواز احمد صدیقی کا پیشہ طب ھے اور میڈیکل سپیشلسٹ کے عہدہ پر فائز ہونے کے ساتھ سیاست میں گہرہ تجربہ اور دلچسپی رکھتے ہیں۔
کشمیر کی آزادی کے لئیے اور کشمیری عوام کو متحد کر کے ایک قوم بنانے تک چین سے نہیں بیٹھیں گے اور ڈاکٹر شاہنواز احمد صدیقی صاحب کی بیس سالہ جدوجہد کو مزید تیز کرنے کے لئیے قومی اتحاد پارٹی کے پلیٹ فارم سے دن رات ایک کیا جائے گا۔
قومی اتحاد پارٹی تیزی سے عوام میں مقبولیت حاصل کر رہی ھے اور کم وقت میں ریاست آزاد کشمیر کی تیسری بڑی پارٹی بن کر سامنے آئی ھے۔